Jaun Elia, the poet whose words in the form poetry/shayari capture our deepest hearts, is known for his soulful and sad poetry. Simple yet profound, Jaun Elia’s sad poetry has the power to reflect on our own experiences and find comfort in its beautiful words. We made this collection of "Jaun Elia sad poetry” from his books ” Lekin” and "Goya” In this post you will find Jaun Elia sad poetry, which has pics that you can use to share on Instagram, Facebook, WhatsApp and other social media platforms

کتاب: لیکن

Jaun Elia sad poetry
Tum tu mere sath raho ge ' main tanha reh jaon ga

عہد رفاقت ٹھیک ہے لیکن’ مجھ کو ایسا لگتا ہے

تم تو میرے ساتھ رہو گی’ میں تنہا رہ جاؤں گا

 Ahd e Rafaqat thek hai lekin, mujh ko aisa lagta hai

Tum tu mere sath raho ge ‘ main tanha reh jaon ga  

john elia sad poetry
Tum ko jahaan e shooq o tamanna mein kya mila

تم کو جہانِ شوق  و تمنا میں کیا مِلا

ہم بھی مِلے تو درہم و برہم مِلے تمھیں

Tum ko jahaan e shooq o tamanna mein kya  mila

Hum bhi mile tu darham o barham mile tumhain

john elia sad poetry
Baat tu dil shikkan hai par yaru!

بات تو دل شکن ہے پر یارو!

عقل سچّی تھی، عشق جھوٹا تھا

Baat tu dil shikkan hai par yaru!

Aqal sachi thi, Ishq jhoota tha

john elia sad poetry
Aadmi, aadmi ko bhool gaya

سب سے پُر اَمن واقعہ یہ ہے

آدمی، آدمی کو بھُول گیا

Sab se pur amman waqya ye hy

Aadmi, aadmi ko bhool gaya

john elia sad poetry
Aik hi apna milne wala tha

ایک ہی اپنا ملنے والا تھا

ایسا بچھڑا کہ پھر مِلا ہی نہیں 

Aik hi apna milne wala tha

Aesa bichra keh phir mila hi nhi

john elia sad poetry
Tum mera dukh bant rahi ho' main dil mein sharminda hoon

تم میرا دُکھ بانٹ رہی ہو، میں دل میں شرمندہ ہوں

اپنے جھوٹے دُکھ سے تم کو کب تک دُکھ پہنچاؤں گا

Tum mera dukh bant rahi ho’ main dil mein sharminda hoon

Apne jhoote dukh se tum ko kab tak dukh pohnchaon ga

john elia sad poetry
Ik tarf main hoon' ik trf tum ho

اِک طرف میں ہوں ‘ اِک طرف تم ہو

جانے کِس نے کِسے خراب کیا

Ik tarf main hoon’ ik trf tum ho

Jane kis ne kise kharab kiya

john elia sad poetry
Dil mein ik aag hai so hai lekin

دِل میں اِک آگ ہے سو ہے لیکن

کوئی معنی نہیں محبت کے

Dil mein ik aag hai so hai lekin

Koi ma’ani nhi muhabbat ke

john elia sad poetry
Teri surat ko dykh kar meri jaan

تیری صورت کو دیکھ کر مری جان

خود بخود دل میں  پیار اُٹھتا ہے 

Teri surat ko dykh kar meri jaan

Khud bakhud dil mein pyar uthta hai

john elia sad poetry
Mere gusse ka asar kya ho ga

میرے غصّے کا اثر کیا ہو گا

مجھ کو غصّے میں ہنسی آتی ہے

Mere gusse ka asar kya ho ga

Mujh ko gusse mein hansi aati hai

john elia sad poetry
Ab ye surat hai jaan e jaan keh tujhe

اب یہ صورت ہے جانِ جاں کہ تجھے 

بھُولنے میں مری بھلائی ہے 

Ab ye surat hai jaan e jaan keh tujhe

Bholne mein meri bhalaii hai

john elia sad poetry
Mar gaye khawb sab ki aankhon ke

مر گئے خواب سب کی آنکھوں کے

ہر طرف ہے گِلہ حقیقت کا

Mar gaye khawb sab ki aankhon ke

Har tarf hai gila haqeeqat ka

john elia sad poetry
Kis se kahun keh aik sarapa wafa muje

کس سے کہوں کہ ایک سراپا وفا مجھے 

تنہائیوں میں چھوڑ کے تنہا چلی گئی 

Kis se kahun keh aik sarapa wafa muje

Tanha’eoon mein choor ke tanha chali gaye

john elia sad poetry
Yahi tu muhabbat hai yaro keh ab wo

یہی تو محبت ہے یارو کہ اب وہ

ہماری طرف کم سے کم دیکھتے ہیں

Yahi tu muhabbat hai yaro keh ab wo

Hamari tarf kam se kam dykhte hain

john elia sad poetry
Tum zamane se lar nahi sakteen

تم زمانے سے لڑ نہیں سکتیں 

خیر یہ راز آج کھول دیا 

دو اجازت! کہ جا رہا ہوں میں

تم نے باتوں میں زہر گُھول دیا

Tum zamane se lar nahi sakteen

Khair ye raaz aaj khool diya

Do ijazat! keh ja raha hoon main

Tum ne batoon mein zehar ghool diya

کتاب: گویا

john elia sad poetry
Tum ne hum ko bhi kar diya barbaad

تم نے ہم کو بھی کر دیا برباد

نادرِ روزگار تھے ہم تو 

Tum ne hum ko bhi kar diya barbaad

Nadar e roozgar the hum tu

john elia sad poetry
Aadmi waqt par gaya ho ga

آدمی وقت پر گیا ہو گا

وقت پہلے گزر گیا ہو گا

Aadmi waqt par gaya ho ga

Waqt pehle guzar gya ho ga

john elia sad poetry
Kabhi kabhi tu bohat yaad aane lagte ho

کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو 

کہ رُوٹھتے ہو کبھی اور منانے لگتے ہو 

Kabhi kabhi tu bohat yaad aane lagte ho 

Keh rothte ho kabhi aur manane lagte ho

john elia sad poetry
Zindagi aik fun hai lamhoon ko

زندگی ایک فن ہے لمحوں کو 

اپنے انداز سے گنوانے کا 

Zindagi aik fun hai lamhoon ko

Apne andaaz se ganwane ka

john elia sad poetry
Is larki ne mujh se bichar kar mar jane ki Thani thi

مجھ سے بچھڑ کر بھی وہ لڑکی کتنی خوش خوش رہتی ہے 

اس لڑکی نے مجھ سے بچھڑ کر مر جانے کی ٹھانی تھی 

Mujh se bichar kar bhi wo larki kitni khush khush rehti hai

Is larki ne mujh se bichar kar mar jane ki Thani thi

john elia sad poetry
Aik natak hai' zindagi jis mein

ایک ناٹک ہے زندگی جس میں 

آہ کی جائے’ واہ کی جائے 

Aik natak hai’ zindagi jis mein

Aah ki jaye’ waah ki jaye

john elia sad poetry
Apni haalat tabah ki jaye

ایک ہی تو ہوّس رہی ہے ہمیں 

اپنی حالت تباہ کی جائے 

Aik hi tu hawas rahi hai hamian

Apni haalat tabah ki jaye

john elia sad poetry
Teri banhoon se hijrat karne wale

تری بانہوں سے ہجرت کرنے والے

نئے ماحول میں گھبرا رہے ہیں 

Teri banhoon se hijrat karne wale

Naye mahol mein ghabra rahe hain

john elia sad poetry
Ab koi guftagu nahi ho ge

اب کوئی گفتگو نہیں ہو گی 

ہم فنا کے تھے ہم فنا کے ہیں

Ab koi guftagu nahi ho ge

Hum fana ke the hum fana ke hain

john elia sad poetry
Dil tamanna se dar gaya janam

دل تمنّا سے ڈر گیا جانم

سارا نشہ اُتر گیا جانم

Dil tamanna se dar gaya janam

Sara nasha utar gaya janam

john elia sad poetry
Phir wo larki mujhe mili hi nahi

وہ جو رہتی تھی دل محلّے میں 

پھر وہ لڑکی مجھے ملی ہی نہیں 

Wo jo rehti thi dil mahalle mein

Phir wo larki mujhe mili hi nahi

john elia sad poetry
Meri jaan ab ye surat hai keh mujh se

مری جاں اب یہ صورت ہے کہ مجھ سے 

تری عادت چھڑائی جا رہی ہے 

Meri jaan ab ye surat hai keh mujh se

Teri aadat churrai ja rahi hai

john elia sad poetry
Apni aankhon ke khawb beche hain

اور تو کیا تھا بیچنے کے لیے 

اپنی آنکھوں کے خواب   بیچے ہیں

Aur to kya tha bechne ke lye 

Apni aankhon ke khawb beche hain

john elia sad poetry
Hijr ki aankhon se aankhain milate jayee

ہجر کی آنکھوں سے آنکھیں تو ملاتے جائیے

ہجر میں کرنا ہے کیا یہ تو بتاتے جائیے 

Hijr ki aankhon se aankhain milate jayee

Hijr mein karna hai kya ye tu btate jayee

john elia sad poetry
Jate jate aap itna kaam tu kijye mera

جاتے جاتے آپ اتنا کام تو کیجیے مرا 

یاد کا سارا سروساماں جلاتے جائیے 

Jate jate aap itna kaam tu kijye mera

Yaad ka sara saro samaan jalate jayee

کتاب: گمان

میں کیا ہوں بس اک ملالِ ماضی

اُس شخص کو حال چاہیے تھا

Main kya hun bus ik malaal e maazi

Us shaks ko haal chayee tha

کچھ تو رشتہ ہے تم سے کم بختو

کچھ نہیں، کوئی بد دعا بھیجو


آپ اب پوچھنے کو آئے ہیں

دل مری جان مر گیا کب کا


دوستو ہم نے اپنا حال اُسے 

جب بھی لکھا خراب ہی لکھا


عذابِ ہجر بڑھا لوں اگر اجازت ہو

اک اور زخم کھا لوں اگر اجازت ہو

تھکا دیا ہے تمھارے فراق نے مجھ کو

کہیں میں خود کو گرا لوں اگر اجازت ہو


ہجر کی آنکھوں سے آنکھیں تو ملاتے جائیے

ہجر میں کرنا ہے کیا یہ تو بتاتے جائیے

رہ گئی امید تو برباد ہو جاؤں گا میں

جائیے تو پھر مجھے سچ مچ بھُلاتے جائیے


آج میں خود سے ہو گیا مایوس

آج اک یار مر گیا میرا


اور تو کیا تھا بیچنے کو

اپنی آنکھوں کے خواب بیچے ہیں


مری جاں اب یہ صورت ہے کہ مجھ سے

تری عادت چھڑائی جا رہی ہے


تمھارا ہجر منالوں اگر اجازت ہو

میں دل کسی سے لگالوں اگر اجازت ہو

کسے ہے خواہشِ مرہم گری مگر پھر بھی

میں اپنے زخم دکھالوں اگر اجازت ہو


وہ جو رہتی تھی دل محلّے میں 

پھر وہ لڑکی مجھے ملی ہی نہیں

ہائے وہ شوق جو نہیں تھا کبھی

ہائے وہ زندگی جو تھی ہی نہیں


اس سے ہر دَم معاملہ ہے مگر

درمیاں کوئی سلسلہ ہی نہیں


اے عزادارو! کرو مجلس بپا

آدمی’ انسان کو مار آئے تو


ہم عجب ہیں کہ اس کی بانہوں میں

شکوہ نارسائی کرتے ہیں


جانے والوں سے پوچھنا یہ صبا

رہے آباد دل گلی کب تک


اب فقط یاد رہ گئی ہے تری

اب فقط تیری یاد بھی کب تک


اب اس کا نام بھی کب یاد ہو گا

جسے ہر دم بھلایا جا رہا ہے


دل تمنّا سے ڈر گیا جانم

سارا نشہ اُتر گیا جانم

اب بھلا کیا رہا ہے کہنے کو

یعنی میں بے اثر گیا جانم


کون سے شوق کِس ہوس کا نہیں

دل مری جان تیرے بس کا نہیں

کیا لڑائی بھلا کہ ہم میں سے

کوئی بھی سینکڑوں برس کا نہیں


باز آجائیے کہ سب فتنے

آپ کی کیوں کے’ اور کیا کے ہیں

اب کوئی گفتگو نہیں ہو گی

ہم فنا کے تھے ہم فنا کے ہیں


دل کی تکلیف کم نہیں کرتے

اب کوئی شکوا ہم نہیں کرتے


عشق محلے میں اب یارو کیا کوئی معشوق نہیں

کتنے قاتل موسم گزرے شور ہوئے فریاد ہوئے

شہروں میں ہی خاک اُڑالو شور مچالو بے حالو

جن دشتوں کی سوچ رہے ہو وہ کب کے برباد ہوئے


بڑا احسان ہم فرما رہے ہیں

کہ اُن کے خط انھیں لوٹا رہے ہیں

نہیں ترکِ محبت پر وہ راضی

قیامت ہے کہ ہم سمجھا رہے ہیں

یہ مت بھولو کہ یہ لمحات ہم کو’

بچھڑنے کے لیے ملوا رہے ہیں

تعجب ہے کہ عشق و عاشقی سے

ابھی کچھ لوگ دھوکا کھا رہے ہیں

کسی صورت انہیں  نفرت ہو ہم سے

ہم اپنے عیب گِنوا رہے ہیں

تری بانہوں سے ہجرت کرنے والے

نئے ماحول میں گھبرا رہے ہیں


ایک ہی تو ہوس رہی ہے ہمیں

اپنی حالت تباہ کی جائے

ایک ناٹک ہے زندگی جس میں 

آہ کی جائے’ واہ کی جائے


ہم سُنے اور سُنائے جاتے تھے

رات بھر کی کہانیاں تھے ہم 


ہر شخص مری ذات سے جانے کے لیے تھا

تُو بھی تو مری ذات سے جانے کے لیے ہے


عجب حالت ہماری ہو گئی ہے

یہ دُنیا اب تمہاری ہو گئی ہے

بہت ہی خوش ہے دل اپنے کیے پر

زمانے بھر میں خواری ہو گئی ہے


چلو بادِ بہاری جا رہی ہے

پِیا جی کی سواری جا رہی ہے

جو اِن روزوں مرا غم ہے وہ یہ ہے

کہ غم سے بُردباری جا رہی ہے

وہ یاد اب ہو رہی ہے دل سے رُخصت

میاں پیاروں کی پیاری جا رہی ہے


میں کہوں کس طرح یہ بات اس سے

تجھ کو جانم مجھی سے خطرہ ہے

اب نہیں کوئی بات خطرے کی

اب سبھی کو سبھی سے خطرہ ہے


جس دن اُس سے بات ہوئی تھی اس دن بھی بے کیف تھا میں 

جس دن اُس کا خط آیا ہےاُس دن بھی ویرانی تھی

امجھ سے بچھڑ کر بھی وہ لڑکی کتنی خوش رہتی ہے

اس لڑکی نے مجھ سے بچھڑ کر مر جانے کی ٹھانی تھی


شوق ہے اس دل درندہ کو

آپ کے ہونٹ کاٹا کھانے کا

زندگی ایک فن ہے لمحوں کو

اپنے انداز سے گنوانے کا


جھوٹ سچ کے کھیل میں ہلکان ہیں

خوب ہیں یہ لڑکیاں بے چاریاں


کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

کہ رُوٹھتے ہو کبھی اور منانے لگتے ہو

گَلہ تو یہ ہے تم آتے نہیں کبھی لیکن

جب آتے بھی ہو تو فوراً ہی جانے لگتے ہو


ہم جو اب آدمی ہیں پہلے کبھی

جام ہوں گے چھلک گئے ہوں گے

وہ بھی ہم سے تھک گیا ہو گا

ہم بھی اب اس سے تھک گئے ہوں گے


دل جو اج جائے تھی دنیا ہوئی آباد اس میں

پہلے سنتے ہیں کہ رہتی تھی کوئی یاد اس میں


دل میں ہے میرے کئی چہروں کی یاد

جانیے میں کِس سے ہوں رُوٹھا ہوا


کہاں گئے کبھی ان کی خبر تو لے ظالم

وہ بے خبر جو تیری زندگی میں آئے تھے


Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top