Paheliyan in Urdu with answer pdf


پہیلیاں

ایک تھال موتیوں سے بھرا

سب کے سر پر اوندھا دھرا

چاروں اور وہ تھالی پِھرے

موتی اس سے ایک نہ گرے

آگ لگے میرے ہی بَل سے

ہر انسان کے آتی کام

دن میں پودے مجھے بناتے

اب بتلاؤ میرا نام

ایک پھل اوپر سے ہرا

اندر سے سینہ لال

رس سے بھرا ہوا ہے سارا

کھانے میں لگتا وہ پیارا

ایک جانور اصلی

جس کی ہڈی نہ پسلی

ایک ڈبے میں بتیس دانے

بوجھنے والے بڑے سیانے

اک راجا کی انوکھی رانی

دُم کے رستے پیتی پانی

شام سمے(وقت)اک پنچھی آوے

ٹُک دیکھے اور چھپ چھپ جاوے

سمجھ کے کہنا قسم ہے تم پر

آگ بِنا اُجالا دُم پر

ایک جان دیکھی بے جان

بولتی ہے پر نہیں زبان

بیچ بازار کرے کاروبار

سچ جھوٹ کا کرے اظہار

دن کو رات کو کبھی نہ ڈرے

سچ بات ہمیشہ کرے

ایک چیز ایسی کہلائے

ہر مذہب کا آدمی کھائے

ایک ہی شکل ایک ہی نام

بیچ میں اس کے رہتا کام

بول نہ جانیں سُنتے سنگ

ان دونوں کے بیچ سُرنگ

ایک سینگ کی ایسی گائے

جتنا دو اتنا ہی کھائے

کھاتے کھاتے گانا گائے

پیٹ نہیں، اس کا بھر پائے

ایک نام کے دو کہلائیں

ایک کو چھوڑیں ایک کو کھائیں

ایک قلعے میں نو دس پریاں

آپس میں سر جوڑے کھڑیاں

تین حرفوں کا میرا نام

کھانے کے میں آتا کام

الٹا سیدھا ایک سمان

نہ میں لڈو نہ میں پان

چڑھے ناک پر پکڑے کان

بچو بولو کون شیطان

چھوٹے بڑے سبھی کو بھائے

بوجھ سکے تو بوجھ

گول مٹول، رنگ ہے پیلا

پیٹ میں داڑھی مونچھ

چھم چھم کر کے شور مچائے

سوتوں کو وہ آن جگائے

آسماں سے گرتی جائے

روتوں کو وہ آن ہنسائے

ذرا سی ہلدی

سارے گھر میں مل دی

رات کے وقت کچھ موتی آئیں

دھوپ کے آتے ہی مٹ جائیں

رنگ بادامی شکل میں انڈے

ابال کو اُن کو کرتے ٹھنڈے

چھلکے ان کے اتارے جاتے

ڈال مسالہ خوب بناتے

ہرا آٹا، لال پراٹھا

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x
Scroll to Top